Pakistan Property Portal, Website
Pakistan Property Portal, Website Dark Mode Light Mode
Blogs News Event Area Guide Careers Register Agency Corporate Login

Owners seeking for compensation of their inherited land from CDA

Real Estate News
22 Jun 2021
Owners seeking for compensation of their inherited land from CDA

Owners seeking for compensation of their inherited land from CDA

ISLAMABAD: The Islamabad High Court decided 35 identical petitions seeking compensations for thousands of people whose inherited lands had been acquired for the development of residential sectors in the federal capital.

According to news source, reports submitted to the court by the CDA, total 304.62 sq-km land has so far been acquired. For reasons best known to the CDA, a practice was adopted at a later stage to acquire land and built-up properties separately.

In the landmark judgement, Chief Justice Athar Minallah observed that the Capital Development Authority (CDA) had misused its powers of acquiring land from villagers to develop sectors mainly for the elite class. On the other hand, the affected villagers were still running from pillar to post to get compensation for their inherited land.

The court ordered that the affected landowners shall be compensated in accordance with the prevailing market value of their land. It also directed the federal government to devise a uniform policy on land compensation for the development of residential sectors.

While civic agencies failed to compensate about 11,000 affected villagers since decades, the judgement highlighted discrimination.

“During the same period, a large number of plots were allotted at throwaway prices to employees of the CDA, including those who had served as chairmen and members of the Board,” the order said.

Justice Minallah noted that plots were created for them in open spaces and green areas in most sought-after developed sectors.

Plots were also allotted to public functionaries of specified groups, including selected mediapersons and lawyers, at prices that were far lower than the market rate.

The judgement stated that 23,844 plots were allotted to the employees and officials of the CDA while “the share of other privileged groups was 7,127 plots against nominal payments”.

Justice Minallah observed: “The petitions in hand were only a tip of the iceberg and the information brought on record later was shocking and inconceivable in a society which claims to be governed under the Constitution.”

After the promulgation of the CDA ordinance, the process for acquiring land was initiated and the first award was announced on Feb 12, 1961.

In order to ‘compensate’ the landowners, policies and regulations were issued from time to time.

The awards were announced separately but not simultaneously. The CDA has so far announced 527 awards for land acquisition and 158 awards for built-up properties.

اسلام آباد: اسلام آباد ہائیکورٹ نے وفاقی دارالحکومت میں رہائشی سیکٹروں کی ترقی کے لئے ہزاروں افراد کے وراثت کی زمینیں حاصل کی ہیں ان کے معاوضے کے لئے 35 درخواستوں کا فیصلہ کیا۔


نیوز ذرائع کے مطابق ، سی ڈی اے کے ذریعہ عدالت میں پیش کی جانے والی رپورٹس کے مطابق ، اب تک کل 304.62 مربع کلومیٹر اراضی حاصل کی جاچکی ہے۔ سی ڈی اے کے بارے میں مشہور وجوہات کی بناء پر ، بعد میں اسٹیج پر الگ الگ زمین اور بلٹ اپ پراپرٹیز حاصل کرنے کے لئے ایک طریقہ اپنایا گیا تھا۔
اس اہم فیصلے میں ، چیف جسٹس اطہر من اللہ نے مشاہدہ کیا کہ کیپیٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) نے دیہاتیوں سے اراضی کے حصول کے اختیارات کا غلط استعمال کرتے ہوئے بنیادی طور پر اشرافیہ طبقے کے شعبوں کو تیار کیا ہے۔ دوسری طرف ، متاثرہ دیہاتی اپنی وراثت میں ملنے والی اراضی کا معاوضہ لینے کے لئے ابھی بھی ستون سے ایک پوسٹ تک بھاگ رہے تھے۔
عدالت نے حکم دیا کہ متاثرہ زمینداروں کو ان کی زمین کی مروجہ مارکیٹ ویلیو کے مطابق معاوضہ دیا جائے۔ اس میں وفاقی حکومت کو رہائشی شعبوں کی ترقی کے لئے زمین کے معاوضے کے لئے یکساں پالیسی وضع کرنے کی بھی ہدایت کی گئی ہے۔
اگرچہ شہری ایجنسیاں کئی دہائیوں سے گیارہ ہزار متاثرہ دیہاتیوں کو معاوضہ دینے میں ناکام رہی ، فیصلے نے امتیازی سلوک کو اجاگر کیا۔
حکم نامے میں کہا گیا ہے ، "اسی عرصے کے دوران ، سی ڈی اے کے ملازمین کو مکروہ قیمتوں پر پلاٹوں کی ایک بڑی تعداد الاٹ کی گئی ، جن میں وہ لوگ شامل تھے جنہوں نے بورڈ کے ممبران اور ممبران کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔
جسٹس من اللہ نے نوٹ کیا کہ ترقی یافتہ سیکٹروں میں سب سے زیادہ ترقی یافتہ شعبوں میں کھلی جگہوں اور سبز علاقوں میں ان کے لئے پلاٹ بنائے گئے ہیں۔
مخصوص گروپس کے عوامی کارندوں کو بھی پلاٹ الاٹ کیے گئے تھے ، جن میں منتخب میڈیاپرسن اور وکیل بھی شامل تھے ، ان قیمتوں پر جو مارکیٹ ریٹ سے کہیں کم تھے۔
فیصلے میں کہا گیا ہے کہ سی ڈی اے کے ملازمین اور عہدیداروں کو 23،844 پلاٹ الاٹ کیے گئے ہیں جبکہ "دیگر مراعات یافتہ گروپوں کا حصہ برائے نام ادائیگیوں کے خلاف 7،127 پلاٹ ہے"۔
جسٹس من اللہ نے مشاہدہ کیا: "پٹیشنوں کو ہاتھ میں لینے کی درخواستیں آئس برگ کا صرف ایک نوک تھیں اور بعد میں ریکارڈ پر لائی جانے والی معلومات ایک ایسے معاشرے میں چونکانے والی اور ناقابل فہم تھی جو آئین کے تحت حکومت کرنے کا دعویٰ کرتی ہے۔"
سی ڈی اے آرڈیننس کے اجرا کے بعد ، زمین کے حصول کے لئے عمل شروع کیا گیا تھا اور پہلا ایوارڈ 12 فروری 1961 کو اعلان کیا گیا تھا۔
زمینداروں کو ’معاوضہ‘ دینے کے لئے ، وقتا فوقتا پالیسیاں اور ضابطے جاری کیے گئے۔
ایوارڈز کا اعلان علیحدہ کیا گیا لیکن بیک وقت نہیں۔ سی ڈی اے اب تک اراضی کے حصول کے لئے 527 ایوارڈز اور بلٹ اپ پراپرٹیز کے لئے 158 ایوارڈز کا اعلان کر چکی ہے۔

Get ilaan App
Get ilaan App

To Buy, Sell & Rent properties on your
finger tips.

Get ilaan App
Get ilaan App
premium property portal to buy,sell and rent

The best property website to buy and sell properties. ilaan.com is Pakistan’s most comprehensive property website, portal, finder focused on improving the visual property viewing experience of users to help them make better-informed decisions regarding capital investment in the real estate sector.

Grab a Coffee

Address
Head office26-A, J3 Block, Johar Town,
Lahore Pakistan
Timings Monday - Friday: 9 am - 6 pm
Saturday: 9 am - 2 pm
Sunday: We are closed.

Call Us

Phone

Get Updated

Subscribe

To get the latest news about ilaan.com subscribe our newsletter.

(required)
Subscribe
Get my Location